رات

Day 10,066 – Sunday – 17 Chaitra 1930 – 28 Rabi ul Awwal 1429 – 06 April 2008

Although not upto the standards of Urdu poetry, prosody or grammar; it is special to me, and it is mine.

البتہ اردو نظم کے اصولوں پر پوری نہیں اترتی؛ لیکن، میری ہے، اور میرے بہت قریب ہے۔

اب یاد کی نیلی چھائوں میں
اس رات کی ہر اک بات رہے
جس رات کو دل بھی دھڑکا تھا
جس رات کو آنکھیں مہکیں تھیں
اک خوف تھا ہر اک بات میں جب
اک جیت تھی ساری رات میں جب
جب چاک گریباں کر بیٹھے
جب حال اور ماضی کر بیٹھے
اب یاد کی نیلی چھائوں میں
اس رات کی ہر اک بات رہے

Advertisements

No comments yet»

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: