Archive for urdu

Faraz

Day 10,207 – Monday – 03 Bhadra 1930 – 22 Shaban 1429 – 25 August 2008

Today, a great light has been lost forever. Ahmed Faraz. A great poet of Urdu. A great man.

Urdu, our society, our culture, our civilization and our people have lost a great presence. The loss can not be described in words.

The ever resounding noise in the background, Keht ur Rijaal, intensifies.

apnay maghmoom kivaron ko muqaffal kar lo

ab yahan koi naheen, koi naheen, aaye ga

But most of all, it was our love for him that will be lost, the love based on his contribution,

aur faraz chahiyen kitnee muhabbatain tujhe

maaon nay teray naam par bachon kay naam rakh diyay

We have lost a great man today, it is very unfortunate that in our day and age no others take the place of the ones lost.

We hope, we hope to see another Faraz, another Faiz, another great poet. We hope.

Advertisements

رات

Day 10,066 – Sunday – 17 Chaitra 1930 – 28 Rabi ul Awwal 1429 – 06 April 2008

Although not upto the standards of Urdu poetry, prosody or grammar; it is special to me, and it is mine.

البتہ اردو نظم کے اصولوں پر پوری نہیں اترتی؛ لیکن، میری ہے، اور میرے بہت قریب ہے۔

اب یاد کی نیلی چھائوں میں
اس رات کی ہر اک بات رہے
جس رات کو دل بھی دھڑکا تھا
جس رات کو آنکھیں مہکیں تھیں
اک خوف تھا ہر اک بات میں جب
اک جیت تھی ساری رات میں جب
جب چاک گریباں کر بیٹھے
جب حال اور ماضی کر بیٹھے
اب یاد کی نیلی چھائوں میں
اس رات کی ہر اک بات رہے

سوال

Tuesday – 21 Zilhaj 1428 – 12 Pausa 1929 – 01 January 2008

اس دنیا کو، میں جو بھی ہوں، جیسا بھی ہوں، مجھے اب یقین ہو گیا ہے کہ، قبول نہیں ہوں۔ میں کہ جو اپنی ہی ایک دنیا میں بسنا چاہتا ہوں۔ میں کہ جو اس دنیا کے چند قوانین قبول تو کر لوں لیکن سب قبول نہیں کر سکتا۔ میں ہر وہ قانون قبول کر سکتا ہوں کہ جس سے انسان اپبی زندگی خوبصورت بنا سکتے ہیں۔ لیکن میں وہ قوانین قبول نہیں کروں گا جو کہ صرف اس لئے را‏ئج ہیں کہ انسانوں نے ابھی تک مختلف چیزوں کو قبول کرنا نہاں سیکھا۔ میں کہ جس کو سب سے زیادہ محبت انسانیت سے ہے اس ہی کے لئے قابل قبول نہیں ہوں۔ تو پھر شاید دنیا کو میں قبول نہیں۔ اور پھر شاید یہ دنیا مجھے قبول نہیں۔

ایک عجیب پریشانی ہے کہ مجھے گھن کی طرح کھائے چلے جا رہی ہے۔ میری جسمانی صحت آہستہ آہستہ اب بہت خراب ہو گئی ہے۔ میری ذہنی صحت آہستہ آسہتہ بہت کمزور ہو گئی ہے۔ میں چڑچڑا ہو گیا ہوں۔ میں صرف تکلیفدہ باتیں کرتا ہوں اور ان ہی سے مجھے سکون ملتا ہے۔ اپبی خواہش کے خلاف اپنے گھر والوں کو خوش رکھنے کے لئے میں نے جو زندگی پچھلے چار سال گزاری وہ اب ضایع کئے گئے وقت کی طرح مجھے دق کر رہی ہے۔

اپبی مرضی کی زندگی گزاریں اور گھر والوں کو اتنا بڑا دکھ دیں کہ وہ میری بے رحم آنکھوں کے سامنے جیتے جی مر جا‏ئیں۔ یا اپنے گھرانے کی مرضی کی زندگی گزاریں اور زندگی کا ہر لمحہ قید اور بندش کے عزاب میں بسر کر دیں۔ دو راستے۔ دونوں ایک انتہائی تکلیف اور اذیت سے بھری ہوئی زندگی کے راستے۔ اور صرف دو راستے۔

اردو زبان کا سب سے گہرا اور اذیت ناک لفظ۔ کاش۔ کاش کہ یہ دنیا مجھے قبول کر لیتی اور مجھے بھی زندگی میں خوشی مل جاتی۔

زندگی جا، چھوڑ دے، پیچھا میرا۔

Reverberations

Tuesday – 21 Zilhaj 1428 – 12 Pausa 1929 – 01 January 2008

The period of depression that started here is still in full swing. Too many questions have been playing in my mind.

Do I lead the life of my own choice and in doing so break away from my family? I believe if I choose my own life my family will eventually break away from me. And I can not loose my family.

Do I lead the life chosen by my family and in doing so spend a life incomplete? Over the past couple of years I have tried this and have realized that I can not keep myself happy if I do not get to live a life of my own desires and choosing.

There is no answer. And I continue to repeat the same thing over and over again. Like the overly cliched broken record. The past couple of months of my blogging about the same thing. Two options, and I can not decide which one. Each leading to pain and suffering. How futile everything is.

I have noticed that recently, over the past couple of months I have stopped making contact with other people. I dont like to go out with friends, or family. I like to keep alone. Life is becoming so miserably painful.

Please, for the love all that is good and beautiful, never force people to lead the lives that you want them to lead because it seems that they have accepted that but they are being eaten alive from inside.

I have stopped talking to friends about this because they feel sorry about it and I dont want them to feel bad or worry about things. I dont like sadness, I want them to be happy. I have stopped talking about this to people who I think are my friends because baring my soul to people who really dont care about what I am going through is pathetic. I can not talk to anyone in my family because they think that my wanting a life at odds with how people live here is extremely selfish and hurtful to them, I do not want to be dubbed any of those things. I have no one to talk to. I think I will eventually need to go to a shrink, if only so I can just go there and cry my heart out with someone who will pay attention but not get hurt.

I hate this. Life has become an increasingly painful experience. What I might love to call a تلخ جام in Urdu. A goblet of unbearably bitter wine. One must drink it, but it is unpleasant to the core.

And in the middle of this, I just want to go away, far far away. Just take my car and go to some far away land where I can live my life again. Alas, if only. And leading the life I am. I know I will be sad each and every moment of existence. And I will sad in retrospect at what I have been living. I hate this. Absolutely hate this.

موت جب زندگی سے بہتر تھی

ہم نے وہ وقت بھی گزارا ہے

And I just hate talking to my family about any of my problems now. I hate it. They always say the same thing. That I am being selfish and that I am being self centered and that they love me and want the best for me and I should do what they want. But I am not selfish and I dont hate them, I just want to be happy.

The ineffectual pursuit of my happiness. What a farce that is life.

Trajedy

Friday – 06 Shawwal 1428 – 27 Asvina 1929 – 19 October 2007

Two powerful bomb blasts have hit the procession of Benazir Bhutto. More than 120 have died as I sit here and write this. With trembling hands and wet eyes. Such loss of life, again and again and again. And it gnaws at your very soul and sanity. Like waves weathering away the cliffs. Cliffs of resolve and honour and dignity and humanity. Senseless violence tearing apart the fabric of our very lives. One after another a trickle of news and violence in our great cities. Murder, destruction and mayhem.

خون کے دھبے دھلیں گے کتنی برساتوں کے بعد

Poetry

Sunday – 01 Shawwal 1428 – 22 Asvina 1929 – 14 October 2007

 جوش ملیح آبادی

سنو اے ساکنان بزم ہستی، ندا کیا آ رہی ہے آسماں سے
آزادی کا ہر اک لمحہ ہے بہتر، غلامی کی حیات جاوداں سے

Josh Maleehabadi 

Listen, o denizens of life, to the sound emanating from the heavens,
Every moment of freedom is better than eternal life of slavery

محمد ابراہیم ذوق

زندگی ہے یا کوئی توفان ہے
ہم تو اس جینے کی ہاتھوں مر چلے

Muhammad Ibrahim Zauq 

Is it life? Or is it a tempest?
This life is my undoing

Nasir Kazmi

 منگل – 19 رمضان 1428 – 10 اسوج 1929 – 02 اکتوبر 2007

شاعری کی دنیا میں ناصر کاظمی ایک ایسا نام ہے کہ جس سے شدت احساس منسلک یہں۔  ایک بہت واضع احساس محرومی۔ زندگی کی تلخیوں کا اس طرح ذکر کہ ان سے مانوسی کا شائبہ۔ افسوس، بہت افسوس۔ اور ایک ملال جو کہ ہر طرف چھایا ہوتا ہے۔ جیسے کہ سردی کی صبح اکیلے گزاری جائے اور بالکل سکوت میں دل ڈوب رہا ہو۔

جب ذرا تیز ہوا ہوتی ہے
کیسی سنسان فضا ہوتی ہے
ہم نے دیکھے ہیں وہ سناٹے بھی
جب ہر اک سانس صدا ہوتی ہے
دل کا یہ ہال ہوا تیرے بعد
جیسے ویران سرا ہوتی ہے
رونا آتا ہے ہمیں بھی لیکن
اس میں توہین وفا ہوتی ہے
منہ اندھیرے کبھی اٹھ کر دیکھو
کیا تر و تازہ ہوا ہوتی ہے
اجنبی دھیان کی ہر موج کے ساتھ
کس قدر تیز ہوا ہوتی ہے
غم کی بے نور گزرکاہوں میں
اک کرن ذوق فزا ہوتی ہے
غمگسار سفر راہ وفا
مژہ آبلہ پا ہوتی ہے
گلشن فکر کی منہ بند کلی
شب ماہتاب میں وا ہوتی ہے
جب نکلتی ہے نگار شب گل
منہ پہ شبنم کی روا ہوتی ہے
حادثہ ہے کہ خزاں سے پہلے
بوئے گل گل سے جدا ہوتی ہے
اک نیا دور جنم لیتا ہے
ایک تہزیب فنا ہوتی ہے
جب کوئی غم نہیں ہوتا ناصر
بے کلی دل کے سوا ہوتی ہے